Commissioner visits flood-hit areas

چترال ( بشیر حسین آزاد ) کمشنر ملاکنڈ ڈویژن عثمان گل نے گذشتہ روز چترال کا دورہ کیا ۔ اور بذریعہ ہیلی کاپٹر چترال کے سیلاب سے متاثر ہونے والے علاقے ، موڑکہو ، ریشن اور کالاش ویلی کا فضائی جائزہ لیا ۔انہوں نے آرمی و ڈسٹرکٹ ایڈمنسٹریشن کے زیر نگرانی انجام پانے والے بحالی کے کاموں پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے اُن کی تعریف کی ۔ تاہم اس بات پر برہمی کا اظہار کیا ۔ کہ سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں بحالی کے کاموں کیلئے تاحال فنڈ ریلیز نہیں کئے گئے ۔ جبکہ اس وقت متاثرہ انفراسٹرکچر کی فوری بحالی کیلئے فنڈ کاکوئی مسئلہ نہیں ہونا چاہیے ۔ انہوں نے کہا ۔ کہ فنڈ کی عدم دستیابی کی بنا پر بحالی کے کاموں میں خلل پڑ سکتا ہے ۔ جس سے چترال کو مزید نقصان پہنچنے کے خدشات ہیں ۔
کمشنر نے ڈپٹی کمشنر چترال امین الحق کو ہدایت کی ۔ کہ فنڈ کے حوالے سے صوبائی حکومت سے قریبی رابطہ رکھے ۔ اور وہ خود بھی اس سلسلے میں جلد سے جلد فنڈ ریلیز کروانے کی کوشش کریں گے ۔ تاکہ عوام کی مشکلات میں کمی لائی جا سکے ۔ انہوں نے لائن ڈیپارٹمنٹ کے آفیسران کو ہدایت کی ۔ کہ وہ دن رات ایک کرکے متاثرٰین کیلئے سہولیات کی فراہمی میں کوئی کسر باقی نہ چھوڑیں ۔ کمشنر عثمان گل نے کہا ۔ کہ وہ جلد بحالی کے کاموں کا جائزہ لینے کیلئے چترال کا دوبارہ دورہ کریں گے ۔ درین اثناسیلاب سے متاثرہ ریشن کے عوام نے کمشنر ملاکنڈ ڈویژن کے ریشن آمد کے باوجود متاثرین سے ملاقات نہ کرنے پر شدید برہمی کا اظہار کیا ہے ۔ علاقے کے ایک متاثرہ شخص علی شیر نے میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہا ۔ کہ کمشنر کی آمد کے سلسلے میں ریشن کے تمام متاثرین کو ایک جگہ جمع ہونے کا کہا گیا تھا ۔ جس پر صبح نو بجے سے متاثرین جمع ہو کر کمشنر کی آمد کا انتظار کرنے لگے ۔ لیکن متاثرین کو اُس وقت بہت مایوسی ہوئی ۔
جب کمشنر ریشن کے ایک مقام پر ہیلی کاپٹرسے اترے ۔ اور متاثرین سے ملے بغیر کوراغ کے مقام پر بحال شدہ چترال بونی روڈ دیکھنے گئے ۔ مقامی لوگوں نے پھر بھی انتظار کیا ۔ کہ شاید واپسی پر وہ اُن سے ملیں گے ۔ لیکن کمشنر واپسی پر بھی متاثرین کو خاطر میں نہیں لائے ۔ جس پر مقامی متاثرین نے کمشنر کے اس رویے کی پُر زور مذمت کی ۔ اور کہا ۔ کہ کمشنر کا یہ رویہ متاثرین کی تضحیک کے مترادف ہے ۔ اس سے علاقے کے لوگوں کو شدید مایوسی ہوئی ہے۔ اس سلسلے میں جب ڈپٹی کمشنر چترال امین الحق سے پوچھا گیا ۔ تو انہوں نے کہا ۔ کہ چونکہ وہ کمشنر کے ساتھ اس دورے میں نہیں تھے ۔ اس لئے اس حوالے سے اُنہیں کوئی معلومات حاصل نہیں ہیں ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *