It was a conspiracy against Chitral's two communities: nazim

انہوں نے کہا کہ ملعون کے ارتکاب فعل کے بعد عوام کی طرف سے رد عمل ایک فطری امر تھا لیکن خدا کا شکر ہے کہ دینی جماعتوں ، علماء اور ڈسٹرکٹ گورنمنٹ کی کوششوں سے مجرم کو سزا دینے کیلئے قانون کے مطابق تمام درکار مواد کو جمع کیا گیا اور اُس کے خلاف توہین رسالت و دہشت گردی قانون کے مطابق سزا دینے کیلئے مقدمہ درج کر لیا گیا ہے۔ اس حوالے سے چھ قوی شہادتیں جج کے سامنے ریکارڈ کی گئی ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ اس سلسلے میں علماء نے جو کردار ادا کیا وہ لائق تحسین و آفرین ہے ۔ ضلع ناظم نے کہا کہ یہ پہلا موقع ہے کہ چترال کی اسماعیلی کمیونٹی نے نہ صرف اس ملعون و مردود شخص کے فعل کی پُر زور مذمت کی بلکہ اس واقعے کے خلاف اپنے جذبات کا بھر پور اظہار کیا ۔ انہوں نے کہا کہ چترال کے علماء نے اپنی دینی اور قانونی فریضہ انتہائی احسن طریقے سے انجام دیا اور مردان کے واقعے کی طر ح غیر قانونی اقدام اُٹھانے کا موقع کسی کو فراہم نہیں کیا۔ اب یہ کام عدالت کا ہے کہ وہ اس شخص کو اُن کے کئے کی سزا دے ۔ ضلع ناظم نے کہا کہ چترال میں آیندہ چار پانچ سالوں کے دوران بہت بڑی تبدیلی آنے والی ہے اور یہ واقعہ چترال کی ترقی کو سبوتاژ کرنے کیلئے ایک بڑی سازش تھی جسے سب نے مل کر ناکام بنایا ۔ انہوں نے کہا کہ در اصل یہ سازش چترال کی دو کمیونٹیز کو لڑانے کیلئے بُنا گیا تھا لیکن خدا کے فضل سے سماج دشمن عناصر اپنے مقاصد میں کامیاب نہ ہوسکے۔ مغفرت شاہ نے کہا کہ یہ بات انتہائی خو ش آیند ہے کہ آٹھ گھنٹے مسلسل تناؤ اور تصادم کے باوجود کوئی انسانی جان ضائع نہیں ہوا ۔ انہوں نے کہا کہ جن بے قصور لوگوں کو گرفتار کیا گیا ہے اُنہیں رہا کرنے کیلئے بات طے ہو چکی ہے ۔ اس موقع پر مولانا عبد الشکور نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اس قسم کا واقعہ مردان میں رونما ہوا تھا جس میں لو گ اپنے جذبات پر قابو نہ پا سکے جبکہ چترال مسجد کے اندر اُسی قسم کا واقعہ رونما ہونے کے باوجود علماء نے جو کردار ادا کیا وہ سب کے سامنے ہے۔]]>

9 Replies to “It was a conspiracy against Chitral's two communities: nazim”

  1. I agree the nazim should clarify his position bcoz it is a very sensitive issue and he being the head of the local govt system has more responsibility to be extra careful about sentiments of people. nazim represents both the communities of Chitral not a political or religious party, so people expect him to be neutral and promoter of harmony and coexistence.

  2. “یہ پہلا موقع ہے کہ چترال کی اسماعیلی کمیونٹی نے نہ صرف اس ملغون و مردود شخص کے فعل کی پرزور مذمت کی” ضلعی ناظم نے اگر یہ جملہ ادا کیا ہے تو میں اس کی شدید مذمت کرتا ہوں۔ اسماعیلی جو آل محمدﷺ کےامامت کے قائل ہیں اور امامت کو ارکان دین میں شامل سمجھتے ہیں تو یہ اسی خاتم النبین رحمت اللعالمیںﷺ کے طفیل سے ہے۔ اس ہستی والاشان ﷺ کے نام کو بیچ سے نکالا جائے تو نہ سنی رہیگا اور نہ شیعہ اسماعیلی کا وجود باقی رہے گا۔ ہم سب کے ماں
    باپ اولاد جان و مال ؐمحمد مصطفیٰ پرقربان ہیں۔ اگر یہ جملہ ضلعی ناظم کی زبان سے ادا نہیں ہوا ہے تو رپورٹر اور آخبار کا ایڈیٹر صاحب اس کی وضاحت کریں۔
    ہم ناظم صاحب کی اس بات سے متفق ہیں کہ اس میں بہت بڑی سازش کا ہاتھب ہوسکتا ہے جسے سامنے لانے کے لیے تشدد پسند بندوں سے جن کو پولیس نے حراست مین لیا ہے مکمل پوچھ گچھ ہونی چاہیے۔

  3. یہ پہلا موقع ہے کہ چترال کی اسماعیلی کمیونٹی نے نہ صرف اس ملعون و مردود شخص کے فعل کی پُر زور مذمت کی
    Shocking Statement from District Nazim. What does he really mean by this statement? Does he want to say that Ismailis Muslims were in favor of such incidents in the past?

  4. Dear Nazim sb,
    As a leader of Jamat e Islami you seriously need to redesign your policy. It was noted during the rioting outside police station that the most violent protesters were either the young members of Jamat e Islami or children of prominent leaders of Jamat e Islami. Their comments and posts on facebook are still there as an evidence of their divisive role. The workers of JUI and their leaders on the other hand proved them selves as a trusted partner in peace. The way Khateeb handled the situation and later the role of Mawlana Abdur Rehman was very impressive.
    The JI workers are wolves in sheep’s skin. Despite the fact that the blasphemer was mentally sick, had become Sunni years ago in Qatar and was a member of the Tablighi Jamat, the workers of JI were engaged in an online hate speech against a specific community.
    Your statement that the innocent people will be released from captivity is violation of national laws. Those who violated the sanctity of Shahi Masjid, burned Khateeb’s car and attacked police station must be given due punishment so that in future no one dares to take the law in their hand.
    The JI leadership at national level should sit together and analyze the recent incidents i.e. role of IJT in attack on Pashtun students in Lahore, role of IJT members in Mashal lynching in Mardan and role of the young JI affiliated youth and students in online hate speech against a community in Chitral. Many of us were celebrating de radicalization of JI after visits of Mawlana Abdul Akber and Maghfirat Shah to Karimabad and Yarkhun valleys and their close interaction with the Ismaili community, however it is evident that they and their workers can never be trusted. Kudos to the Shahi Masjid Khateeb and thanks to leadership and workers of JUI.

  5. .. مجہے تو اس واقعے کو سازش کہنا بھی کوئی سازش لگ رہی ہے

  6. We highly appreciate the sincere efforts of all Ulamai Kiram, scholars religious and political leaders for maintaining peace and harmony in Chitral after recent incident. We pay salute to khateeb sahib khaleequzzaman District Nazim, Commandent Chitral Task Force DC,DPO and all law enforcement agencies in particular for their dedicated and on time steps in eradication of severe conspiracy unrest and Fitna.

  7. ضلع ناظم نے کہا کہ یہ پہلا موقع ہے کہ چترال کی اسماعیلی کمیونٹی نے نہ صرف اس ملعون و مردود شخص کے فعل کی پُر
    زور مذمت کی”
    اس بات کو سمجھ نہیں سکا بعض لوگ کہہ رہے ہیں کہ خبر نگار نے اپنی طرف سے یہ بات ایڈ کی ہے اگر یہ ضلع ناظم
    کی زبان سے ادا ہوا تو آفسوس کے علاوہ کچھ نہیں کہا جاسکتا۔۔۔
    میں نہیں سمجھتا کہ ضلع ناظم نے اتنے غیر سنجیدہ الفاظ ادا کئے ہیں۔۔

  8. Good hum ne aik bar phir sabit kiya ke chitral ke log muhazab aur educated aur qanun pasand log hen aur civilized hen hum aik bar phir tamam ulame karam aur khas kar chitral shahi masjid ke khatib ko khiraj taseen pash kartay hen ke aus ki koshish se chitral ka aman barkarar raha

Leave a Reply

Your email address will not be published.