2 Replies to “پروفیسر گل حمیرہ – چترالیوں کی ماں”

  1. Yes Mr Adil I also agreed with your viewpoints.Mr Hayat mixed so many unnecessary and useless stuffs here in this beautiful article.There is no conclusion at all.we appreciate his good thinking and straggle for some one but there is no structure and beginning.l am a regular reader of Mr Hayat his all articles are well prepared and up to the point. But this is absolutely out of context.we request please try to keep on the track then every ones can understand your viewpoints.Thank you.

  2. ایک مشورہ ہے: کسی شخصیت پہ کچھ لکھنا ہو تو انکی شخصیت پہ زیادہ لکھیں انکے سفر کے بارے میں انکی زندگی کے بارے میں۔ ادھر ادھر کے الفاط اور تراکیب کو ملا کے غیر متعلقہ مضمون میں گھسانے سے نہ صرف مضمون بورنگ ہوجاتا ہے بلکہ اسکا اصل مقصد بھی فوت ہوجاتا ہے ۔ اب اس مضمون سے ان خاتوں کے بارے میں صرف اتنا پتہ چلا کہ ملتان سے تھیں اور تیئس سال چترال میں لیکچرر رہیں بس۔ باقی عجیب و غریب تراکیب کی کچھ سمجھ نہی لگی ۔ شکریہ

Leave a Reply

Your email address will not be published.